دنیا میں چھ حیران کن جگہوں کی معلومات

1
75
hiran-kun jaghyn

دنیا میں چھ حیران کن جگہوں کی معلومات

 

:تاج محل (Taj mehal)

شاہ جہان کے دور تک مغلوں کی عظیم سلطنت پورے برصغیر میں پھیل چکی تھی ۔مغل سلطنت کے خزانے منہ تک بھرے ہوئے تھے۔ ممتاز محل بادشاہ کی تیسری اور سب سے چہیتی بیوی تھی ۔دراصل یہ مزار اس چہیتی بیوی کے مرنے کے بعد اس کی یاد میں بادشاہ نے بنوایا تھا ۔تاج محل 1632 میں ممتاز کے مرنے کے بعد بنانا شروع کیا اور 1653 میں اس محل کی تعمیر مکمل ہوئی۔ بتایا جاتا ہے کہ ایک تخمینے کے مطابق تاج محل پر تقریبا تین کروڑ بیس لاکھ روپے خرچہ آیا تھا ۔

اور سلطنت کنگال ہو گئی تھی ۔اسی وجہ سے شاہجہان کے بیٹے اورنگ زیب نے باپ کو تختہ دار سے اتار کر خود قبضہ لیا اور شاہجہان کو قید خانے میں بند کر دیا ۔جدھر سے وہ ایک کھڑکی میں سے اپنی محبوب بیوی کا مزار دیکھ سکتا تھا ۔بتایا جاتا ہے کہ تاج محل کی تعمیر مکمل ہونے کے بعد تمام کاریگروں کے ہاتھ کاٹ دیے تھے تاکہ وہ اس قسم کی کوئی اور عمارت نہ بنا سکیں ۔

تاج محل آج بھی اپنی پوری آب و تاب کے ساتھ انڈیا کے گراؤنڈ میں کھڑا ہے ۔پوری دنیا سے لوگ اس محبت کے کرشمہ کو دیکھنے کے لیے انڈیا کا رخ کرتے ہیں ۔

hiran-kun jaghyn:پیسا کا ٹیڑھا مینار (pissa ka minar)

پیسا کا ٹیڑھا مینار اٹلی کے صوبے پیسا میں واقع ہے ۔یہ مینار اصل میں جارج کا گھنٹی گھر ہے ۔جو کہ تعمیر کے ساتھ ساتھ ہی ٹیڑھا ہونا شروع ہو گیا تھا ۔اس 185 فٹ اونچے مینار میں 296 سیڑھیاں ہے ۔اس کی تعمیر کی سنگ بنیاد 14 اگست 1173 کو ایک جنگ کی کامیابی کے بعد رکھی گئی ۔

 مرحلے میں صرف اس کی بیس اور ایک منزل تعمیر کی گئی ۔1178 میں اس کی تعمیر دوبارہ شروع کی گئی جس میں دو منزلوں کا اضافہ ہوا ۔کیوں کے اس وقت اس کی مٹی کمزور ہونے کی وجہ سے اس منزل نے لٹکنا شروع کر دیا تھا ۔اس وقت اس کی تعمیر روک کے عارضی طور پر تیسری منزل پر گھڑیال لٹکا دیا گیا ۔میں تیسری دفعہ اس پر دوبارہ کام شروع کیا گیا اور آخر کار 1319میں اس کی آخری منزل سات ويں منزل تعمیر کی گئی ۔

اس میں آخری گھنٹی 1655 میں نصب کی گئی ۔1990 سے لے کر 2001تک اس کی جھکی ہوئی سمت کو سیدھا کرنے پر کام کیا گیا ۔جس سے اس کی جھکی ہوئی سمت 5۔5ڈگری سے کم کرکے ۔3.99کر دیا گیا ۔اور ابھی تک یہ ا ٹلی میں موجود ہے ۔

hiran-kun jaghyn:عظیم دیوار چین (Cheen wall)

دیوار چین چین کے تاریخی شمالی کناروں پر موجود ہے ۔یہ دیوار مشرق سے مغرب کی طرف جاتی ہے ۔یہ 700 قبل مسیح میں تیار کی گئی ۔اس کا مقصد شمال سے آنے والے حملوں کو ملک کو روکنا ہے ۔اس دیوار کی تعمیر کی صدیوں کے بعد مکمل ہوئی ۔پہلے پہل ہر صوبے نے اپنی اپنی دیوار بنائی ۔اس کی بنائی ہوئی دیوار تھوڑی بچی تھی اس دیوار کا مرمت کا کام شروع سے 1700 عیسوی تک جاری رہا ۔آج ہم جو دیوار دیکھتے ہیں وہ ترمنگ خاندان نے 1400عیسوی میں تعمیر کی ۔

ایک سروے کے مطابق منگ خاندان کی تعمیر شدہ دیوار 8850کلومیٹر ہے ۔اصل 6259دیوار کلومیٹر ہے 359 کلو میٹر لمبی خندقیں ہیں ۔اور 2232کلو میٹر لمبی قدرتی دیوار جس میں پہاڑ اور دریا وغیرہ شامل ہیں ۔اس دیوار کی اونچائی 26 فٹ اور اس دیوار کی چوڑائی 16 فٹ ہے ۔اتنی لمبی دیوار دیکھ کے انسان کی سچی لگن اور انتھک محنت کا ثبوت دیتی ہے ۔

پیڑا (pera)

جنوبی لبنان میں واقع ہے اس جگہ پہاڑوں کو کاٹ کر بنائے ہوئے محلات دنیا بھر میں مشہور ہیں ۔پیڑا سٹی کو روز سٹی بھی کہا جاتا ہے کیونکہ یہ پہاڑوں کو کاٹ کر بنایا گیا ہے ۔یہ گلابی رنگت کے ہیں ۔ لبنان کی پہچان ہے اور سب سے بڑا تفریحی مقام بھی ہے ۔

یہ جگہ کافی عرصہ تک دنیا کی نظروں سے اوجھل رہی اور پھر 1812میں ایک ماہر آثار قدیمہ جان لوڈوگ میں دریافت کیا ۔امریکی میگزین کے مطابق 28 جگہوں میں سے وہ جگہ ہے جس کو مرنے سے پہلے دیکھ لینا چاہیے ۔

hiran-kun jaghyn:چیچن عتزا(cheen etza)

یہ ایک قدیم شہر ہے جو کہ 600 عیسوی میں میکسیکو کے صوبہ یکا تان میں لوگوں نے بسایا تھا ۔اس جگہ پر بیشمار عمارتیں اپنی اصل حالت میں موجود کھڑی ہیں ۔مگر کی عمارتیں زلزلے کی وجہ سے تباہ ہو چکی ہیں ۔

یہ شہر اور آثار قدیمہ کا سب سے بڑا شہر تھا ۔عتزا لفظ دراصل مایا زبان کا لفظ ہے جس کا مطلب کے اکنواں منہ پر کے ہیں ۔ شہر آثارقدیمہ کا گڑھ تھا ۔یہاں بڑی بڑی عمارتیں اور منڈیاں ہیں ۔ہر سال تقریبا 15 لاکھ لوگ اس کو دیکھنے کے لیے میکسیکو کا رخ کرتے ہیں ۔

hiran-kun jaghyn:کولو سییم (kolo cema)

عمارت اٹلی کے شہر روم میں واقع ہے ۔یہ عمارت70 عیسوی میں تعمیر ہونا شروع ہوئی اور 80 عیسوی میں مکمل تعمیر ہوگی ۔اس عمارت کو مکمل طور پر کنکریٹ اور پتھروں سے تعمیر کیا گئیا ہے ۔ماہرین کا کہنا ہے کہ ایک وقت میں اس پر 50 سے 80 ہزار لوگ بیٹھ سکتے ہیں ۔یہ عمارت انسانوں کے وحشت ناک لڑائیوں اور کھیلوں کی وجہ سے بنائی گئی ہے۔

 عمارت اکیسویں صدی میں بھی تباہ و برباد حالت میں کھڑی ہے ۔یہ عمارت کئی زلزلوں اور پتھر چوروں کی وجہ سے تباہ ہوگئی ہے ۔کولو سییم عظیم روم کی پہچان ہے ۔اب یہ اٹلی کے شہر روم کا سب سے بڑا تاریخی مرکز بھی ہے ۔610فٹ لمبا اور 515 فٹ چوڑا اور 6 ایکڑ پر محیط عمارت ہے ۔اس کی باہر والی دیواریں 157 فٹ اونچی ہیں ۔اس وقت روم کا یہ سب سے بڑا تاریخی مرکز ہے ۔

Please follow and like us:
error4
Tweet 20
fb-share-icon20

Leave a Reply